3 April, 2017 20:57


NADEEM MALIK LIVE

www.samaa.tv/videos/NadeemMalik

03-APRIL-2017

جب ہم نے اے ڈی خواجہ کو رکھا تھا تب بھی ہم پر تنقید ہوئی تھی اب بھی ہو رہی ہے۔ مولا بخش چانڈیو کی ندیم ملک لائیو میں گفتگو

اے ڈی خواجہ نے خود کہا ہے کہ اس پر پولیس میں بھرتیوں کے سلسلہ میں حکومت کا کوئی دباؤ نہیں ہے۔ مولا بخش چانڈیو

اے ڈی خواجہ کونکالنا سندھ حکومت کا حق ہے وفاقی حکومت کا اس معاملہ میں کود جانا اچھی بات نہیں ہے۔ مولا بخش چانڈیو

اگر اے ڈی خواجہ نے کراچی آپریشن میں اچھا کام کیا تو ایسے افسر کی قدر ضرور کرنی چاہئیے۔ محسن شاہنواز رانجھا

کے پی کے میں پولیس ریفارمز کی وجہ سے دوسرے صوبوں پر پریشر آیا ہے۔ تسنیم احمد نورانی

اس وقت مسئلہ یہ ہے کہ کیا بیوروکریسی کو اتنا وقت اور آزادی دی جا رہی ہے کہ وہ کچھ کر کے دکھا سکے۔ تسنیم احمد نورانی

آئی جی پولیس وفاقی حکومت لگاتی ہے لیکن ایسا نہیں ہوتا کہ صوبائی حکومت کی کوئی رائے ہی نہیں لی جاتی۔ سلمان اکرم راجہ

عدالت کے سامنے یہ بات آئی ہے کہ اے ڈی خواجہ کو ہٹانے کا فیصلہ وفاقی کابینہ نے نہیں بلکہ وزارت داخلہ نے کیا ہے۔ سلمان اکرم راجہ

سندھ حکومت نے اے ڈی خواجہ کو لگا کر بہت غلطی کی وہاں تھانے کی بولی لگتی ہے اور یہ بات سب کو پتہ ہے۔ عمران اسماعیل

اگر اے ڈی خواجہ بہت اچھے افسر ہیں تو پنجاب انہیں اپنے پاس بلا لے۔ مولا بخش چانڈیو

سرگودھا میں بیس بندوں کو قتل کرنے والا پیر شراب پیتا تھا۔ محسن شاہنواز رانجھا

جن لوگوں کو پیر نے قتل کیا وہ بہت اچھی طرح پڑھے لکھے تھے۔ محسن شاہنواز رانجھا

جو کچھ سرگودھا میں ہوا ایسا پوری دنیا میں ہوتا ہے یہ پاگل پن ہے اس کو ردالفساد سے نہیں جوڑیں۔ سلمان اکرم راجہ

سرگودھا کے واقعہ میں کوئی مدعی بننے کوتیار نہیں ہے لوگ سمجھتے ہیں کہ مرنے والے جنت میں چلے گئے ہیں۔ محسن شاہنواز رانجھا

لوگوں کے زہنوں پر قبضہ کر لیا جاتا ہے جس طرح مدرسے میں خود کش بمبار بن رہے ہیں اسی طرح ان لوگوں کو تل کر دیا گیا ہے۔ تسنیم احمد نورانی

بیس لوگوں کو کیونکہ طالبان نے نہیں بلکہ پیر نے مارا ہے اس لئیے ہم اسے دہشت گردی نہیں کہہ رہے یہ دہشت گردی ہے۔ عمران اسماعیل

سرگودھا کے واقع کی ایف آئی آر دہشت گردی کے تحت کاٹی گئی ہے۔ محسن شاہنواز رانجھا

کسی کو جرم پر اکسانا جرم ہے لیکن بدعت اور بھنگ پینا ہمارے معاشرے میں رچ بس چکا ہے۔ سلمان اکرام راجہ

حکومت بدعت کے مسئلہ میں نہیں پڑ سکتی بدعت کی تشریح ہر ایک کے لئیے مختلف ہے۔ سلمان اکرم راجہ

جہاں مزار ہوتا ہے وہاں کے لوگوں اور پولیس کو معلوم ہوتا ہے کہ یہ کس قسم کا ہے جہاں غیر قانونی کام ہو اس کے لئیے ایک علحیدہ آپریشن ہونا چاہئیے۔ تسنیم احمد نورانی

اے پی سی کا واقعہ ہو یا سرگودھا کے قتل یہ سب دہشت گردی ہے اس کے خلاف ایکشن ہونا چاہئیے۔ عمران اسماعیل

جہاں جہاں بھی مزار ہیں ان کا ایک ضابطہ اخلاق ہونا چاہئیے اس میں ان کا اپنا فائدہ ہے۔ محسن شاہنواز رانجھا

http://naeemmalik.wordpress.com/

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s