30 May, 2017 14:04


NADEEM MALIK LIVE

www.samaa.tv/videos/NadeemMalik

29-MAY-2017

شریف خاندان نے جے آئی ٹی کے دو ممبران پر اعراض کر کے اس پر دباؤ ڈالنے کی کوشش کی ہے۔ اعتزاز احسن کی ندیم ملک لائیو میں گفتگو

ایک ممبر پر اعتراض ہے کہ وہ میاں اظہر کے قریبی رشتہ دار ہیں ایک زمانے میں وہ مسلم لیگ ن میں تھے اور ان کے پنجاب کے گورنر تھے۔ اعتزاز احسن

ڈان لیکس کی انکوائری ٹیم میں مریم نواز کے رشتہ دار تھے اس وقت انہوں نے اعراض کیوں نہیں کیا۔ اعتزاز احسن

حسین نواز اپنے وکیل کو بھی جے آئی ٹی میں ساتھ لے کر جاتے ہیں ایسا نہیں ہوتا یہ تفتیش ہو رہی ہے اس میں وکیل ساتھ ہونے کا حق نہیں ہے ملزم کو خود جوابات دینے ہوتے ہیں۔

جے آئی ٹی کو ساٹھ دنوں کی ضرورت ہی نہیں ہے چار دنوں کا معاملہ ہے فیصلہ ہو سکتا ہے۔

میاں نواز شریف نے خود کہا ہے کہ لندن فلیٹس ان کے ہیں اب یہ ان کی ملکیت کے کاغزات دیں یہ ان کے پاس ہونے چاہئییں یہ مالک ہیں۔

جے آئی ٹی لندن یا قطر کی جانب جانے کی بجائے میاں خاندان سے ثبوت مانگے جو ان کے پاس ہیں اور ہونے بھی چاہئییں۔

عارف علوی پی ٹی آئی نے کہا کہ ہم کہتے ہیں کہ نواز شریف کے ہوتے ہوئے شفاف تحقیق نہیں ہو سکتی اس پر کچھ نہیں بولتے لیکن جے آئی ٹی پر رشتہ داری کا اعتراض کر رہے ہیں۔

کراچی میں التوارکی نامی ایک سٹیل مل تین سو ملین ڈالر میں لگی جسے حکومت نے گیس نہیں دی مسلم لیگ ن والے بڑے ٹیڑھے دشمن ہیں۔

التوارکی مل پر قوم کا تین سو ملین ڈالر خرچ ہوا ہے اور وہ بند پڑی ہے۔

نہال ہاشمی مسلم لیگ ن نے کہا اگر حسین نوا کہتا ہے کہ جے آئی ٹی کا ممبر عامر عزیز کرپٹ ہے یہ مشرف کے ساتھ تھا تو کیا غلط کرتا ہے۔

عامر عزیز نے حدیبیہ پیپر ملز کی تفتیش میں غلط ریفرنسزز دئے تھے۔

اگر حسین نواز کہتا ہے کہ بلال رسول کی بیوی ق لیگ کی طرف سے الیکشن امیدوار تھی تو کیا غلط کہتا ہے۔

بلال رسول اور ان کی بیوی عمران خان کے لیے فنڈنگ بھی کرتے رہے۔

عامر عزیز نے حسین نواز کو اتوار کے دن سوالات کرنے کے لیے بلا لیا یہ کونسے قانون کے تحت کیا۔+

آصف زرداری نے جیل میں اپنی زبان خود پیپسی کے ڈھکن سے کاٹی تھی۔

شہلا رضا پیپلز پارٹی نے کہا کہ شریف خاندان جے آئی ٹی کی طرف سے تفتیش کے لئیے بلائے جانے پر پریشان کیوں ہے۔

شریف فیملی شاہی خاندان نہیں ہے اور نہ حسین نواز کوئی شہزادہ ہے ان سے سوالات پوچھے جا سکتے ہیں۔

آصف زرداری کو گیارہ سال جیل میں رکھا ابھی بھی شریف خاندان کے بارے میں رویہ نرم ہے ایک عام آدمی پر ایسے فراڈ کا کیس ہوتا تو وہ کہاں ہوتا۔

آصف زرداری کی جیل میں زبان تک کاٹ دی گئی تھی۔

تاریخ گواہ ہے کہ کس طرح مسلم لیگ ن نے ججوں کو فون کیا اور غلام عدالتوں نے کس طرح کردار ادا کیا۔

میں نہیں سمجھتی کہ کوئی منی ٹریل ہے اگر ہوتی تو اب تک پیش کر چکے ہوتے۔

مسلم لیگ ن کی کوشش ہے کہ معاملات کو لٹکا دیا جائے اور جے آئی ٹی کو متنازع بنا دیا جائے۔

مسلم لیگ ن والے سیاسی شہید بننے کی کوشش کر رہے ہیں۔

فروغ نسیم ایم کیو ایم نے کہا کہ جے آئی ٹٰی سپریم کورٹ نے بنائی ہے اور سب کو اس کے ساتھ تعاون کرنا چاہئیے۔

نیشنل بنک کے آدمی کو اب عدالت میں پیش ہونا پڑے گا عدالت نہ انہیں پیش نہ ہونے کی صورت میں طریقہ کار بھی بتا دیا ہے۔

قطر کے شہزادے کو عدالت میں پیش بھی ہونا ہے اور یہ بھی بتانا ہے کہ جو کچھ خط میں لکھا ہے وہ درست ہے۔

اگر قطر کے شہزادے عدالت میں پیش نہیں ہوئے تو پھر شریف خاندان کا جو سب سے بڑا ثبوت ہے وہ وہیں ختم ہو جائے گا۔

کاشف مسعود اگر نہیں بھی پیش ہوں تو فرق نہیں پڑتا لیکن قطری خط ثابت نہ ہوا تو ایسی صورت حال ہو جائے گی کہ جیسے عمارت دھڑام سے نیچے گرجاتی ہے۔

http://naeemmalik.wordpress.com/

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s