14 December, 2017 21:21


NADEEM MALIK LIVE

www.samaa.tv/videos/NadeemMalik

14-DECEMBER-2017

ایاز صادق نے صاف طور پر ان حالات کا زکر کیا ہے جو اس ملک میں بنا دئیے گئے ہیں۔ ضعیم قادری کی ندیم ملک لائیو میں گفتگو

پچھلے کچھ مہینوں میں جو چند واقعات ہوئے ہیں وہ بھی بتا رہے ہیں کہ اسمبلیاں نہیں چل سکیں گی۔

وزیراعظم کو اقامہ پر نکال دیا گیا اور جے آئی ٹی ان کے خلاف کچھ نہیں ڈھونڈھ پائی۔

مسلم لیگ ن کے لیڈر نواز شریف ہیں اگر ان کے بعد کسی نام آتا ہے توہ وہ شہباز شریف ہیں۔

وقت پر انتخابات تمام سیاسی جماعتوں کی زمہ داری ہے۔

آئندہ آنے والے دنوں میں اور بھی دھرنے ہوں گے اور شبلی فراز اور کائرہ صاحب قادری صاحب کے ساتھ ٹرک پر ہوں گے۔

مولانا مفتی محمود اور نورانی دینی حلقوں کو آئین کی حدود میں رہ کر سیاست کرنے کی طرف لائے میں ایم ایم اے کے دوبارہ فعال ہونے پر خوش آمدید کہتا ہوں۔

پی ٹی آئی کے شبلی فراز نے کہا کہ

ایاز صادق کے بیان میں وزن ہے کیونکہ وہ دیکھ رہے ہیں کہ اسمبلی فنکشنل نہیں ہے ارکان اسمبلی میں نہیں آ رہے۔

جب حکومت اپنا کام نہیں کرتی تو غیر جمہوری قوتوں کو موقع مل جاتا ہے۔

ہمیں ایم ایم اے سے کوئی خطرہ نظر نہیں آ رہا پی ٹی آئی کے پی کے میں بہت مظبوط ہے۔

موجودہ حالات سے نکلنے کے لئیے قبل از وقت انتخابات کروانا بہت ضروری ہے۔

پیپلز پارٹی کے قمر زمان کائرہ نے کہا کہ

سپیکر ایاز صادق نے وہی بات کہی ہے جو نواز شریف اور مسلم لیگ ن کے دورے لوگ کہتے رہتے ہیں۔

مسلم لیگ ن کہتی ہے کہ اس کے خلاف سازش ہو رہی ہے اور وہ اسٹیبلشمنٹ، عدلیہ اور ایجنسیوں پر الزام لگاتی ہے۔

جن پانچ لوگوں نے نواز شریف کو نا اہل قرار دیا ہے وہ اس ملک کے جج ہیں۔

نواز شریف کہتے ہیں کہ ان کی کرپشن پر فیصلہ عوام کریں گے اس کا مطلب یہ ہے کہ سیاست دانوں کو کھلی چھٹی دے دی جائے۔

ایاز صادق جن خدشات کا اظہار کر رہے ہیں ان پر پارلیمانی لیڈروں کا ایک اجلاس بلایں۔

ایم ایم اے کی جماعتوں کے اتحاد میں بہت سی رکاوٹیں ہیں۔

فضل الرحمان مسلم لیگ ن جبکہ جاعت اسلامی پی ٹی آئی کی اتحادی ہیں۔

فضل الرحمان فاٹا کے کے پی کے میں انضمام کے خلاف ہیں جبکہ جماعت اسلامی اس کے لئیے دھرنے دے رہی ہے۔

میرے چیرمین نے واضع طور پر کہا ہے کہ الیکشن وقت پر ہونے چاہئییں نہ ایک دن پہلے اور نہ بعد میں۔

حکومت نے ہم سے وعدہ کیا تھا کہ چند حلقوں میں مردم شماری کے نتائج پر تیسری پارٹی سے تحقیق کروا لی جائے لیکن اس پر ایک انچ بھی پیشرفت نہیں ہوئی ہے۔

ایم ایم اے کے شاہ اویس نورانی نے کہا کہ

دو ہزار دو کی طرح دو ہزار اٹھارہ کے الیکشن کے بعد بھی ایم ایم اے حکومت بنائے گی۔

ایم ایم اے چاروں صوبوں اور گلگت بلتستان سے بھر پور طریقے سے الیکشن میں حصہ لے گی۔

ہم غیر سنجیدہ کریکٹرز کو اپنے اتحاد میں شامل نہیں کریں گے لیکن سنجیدہ اور جمہوریت میں یقین رکھنے والوں کے لئیے دروازے کھلے ہیں۔

جے یو آئی کا مسلم لیگ ن جبکہ جماعت اسلامی کا پی ٹی آئی سے حکومتی اتحاد ہے سیاسی نہیں ہے۔

فاٹا کے کے پی کے میں انضمام کے مسئلے پر ہم نے ایک کمیٹی بنا دی ہے جو اپنی میٹنگ کرے گی۔

http://naeemmalik.wordpress.com/

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

w

Connecting to %s